Home / ادب / کٹھہ مصرال خوشاب پنجاب پاکستان کا قدیمی گاؤں

کٹھہ مصرال خوشاب پنجاب پاکستان کا قدیمی گاؤں

 میرا گاؤں میری جنت

Image For Khoshab Punjab

کٹھہ مصرال

کٹھہ ہندی زبان کا لفظ ہے۔جس کے معنی محنت،مشّقت، پانچ سیرغّلے کا پیمانہ اور میٹھے پانی کا تالاب ہے۔قرین خیال کیا جاتا ہے کہ کٹھہ مصرال میں ایک قدیمی اور دائمی چشمہء آب ہے اسی وجہ سے اس گاؤں کا نام ’’کٹھہ‘‘ پڑ گیا ہو۔

یہ گیارہویں صدی میں آباد ہوا ۔اُس وقت یہاں دو قومیں آباد تھیں جن میں’’ جنجو عہ ر ا جپوت‘‘ اور دوسری ’’آرائیں‘‘۔کٹھہ مصرال کے جنوب مشرق میں تین(۳)کلو میٹر کی مُسافت پر ایک گاؤں’’کٹھہ سگھرال‘‘ بھی واقع ہے۔

کٹھہ مصرال اورکٹھہ سگھرال کے متعلق یہ بھی کہا جاتا ہے کہ جہاں آج کل کٹھہ مصرال اور کٹھہ سگھرال آباد ہیں وہاں سب سے پہلے جنجوعہ قوم سے تعلق رکھنے والے دو بھائی ’’راجامصر‘‘ اور’’ راجا سگھر‘‘آباد ہوئے جبکہ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ وہ چچا بھتیجا تھے ۔کہاجاتاہے کہ اسی وجہ سے اِن گاؤں کے نام ’’کٹھہ مصرال ‘‘اور’’ کٹھہ سگھرال‘‘ پڑ گئے تھے۔

کٹھہ مصرال کی آبادی آٹھ ہزار(۸۰۰۰)نفوس پر مشتمل ہے۔ یہاں کی ساٹھ فیصد آبادی جنجوعہ قوم کی گوتیں ملکال،حق مال، بڈھال،کرمال،پرجال،بخشال اور گِکڑال وغیرہ ہیں اور باقی چالیس فیصد آبادی دوسری قوموں یعنی موچی،حجام،دھنائی،لنگاہ،تھہیم، پاولی،مسلم شیخ،جاندری اعوان،مہر(آرائیں)،لوہار،مستری،ڈھیور اور جٹ برادری پر مشتمل ہے۔

یہاں کی مقامی زُبان ’’پنجابی‘‘ ہے ۔کٹھہ مصرال کے شمال اور مغرب میں دِل کش اور خوب صورت پہاڑ ہیں جہاں کوئلے اور نمک کے وسیع زخائر موجود ہیں اور یہ نہایت ہی خوب صورت اور تفریحی مقام ہے اورمشرق میں ایک چھوٹا سا گاؤں’’کوٹلی راجگان ‘‘واقع ہے۔

کٹھہ مصرال کے جنوب میں زرخیز زمینیں ہیں جس پر اِہل کٹھہ ٹماٹر، پیاز،جوار،باجرہ،گندم اور مختلف قسم کی سبزیاں کاشت کرتے ہیں جن کی آمدن سے یہاں کے باسی ضروریاتِ زندگی اور اپنے پیٹ کی آگ بُجھاتے ہیں ۔

کٹھہ مصرال میں ایک میٹھا چشمہ بھی ہے جِسے مقامی زُبان میں ’’جے‘‘ کہا جاتا ہے۔ اسی چشمے سے کٹھہ مصرال ،کٹھہ سگھرال اورکوٹلی کے مکین اپنی اپنی فصلوں کو سیراب کرتے ہیں اور یہی پانی آب نوشی کے بھی کام آتا ہے اِسی چشمہ پر قدیم دور کی بنی ہوئیں آٹے کی پن چکیاں بھی موجود ہیں

جِنھیں مقا می زبان میں’’ جَندر‘‘ کہتے ہیں۔ اِن جندروں میں سے چودہ جندر اَب بھی اپنی مکمل شان وشوکت کے ساتھ آباد ہیں جبکہ ماضی میں چلنے والے نو(۹) جندروں کی باقیات بھی مِلی ہیں ۔ جو اُن کے ماضی میں موجود ہونے کاپتہ دیتی ہیں۔

کٹھہ مصرال میں لڑکوں کے لئے’’ گورنمنٹ اِیلمنٹری سکول ‘‘اور لڑکیوں کے لئے’’ گورنمنٹ گرلز کمیونٹی ماڈل سکول ‘‘بھی قائم کیا گیا ہے اور دِلچسپ بات یہ ہے کہ لڑکیوں کے سکول میں ہندؤں کا مقدس مقام’’ مندر‘‘ بھی موجود ہے جہاں ماضی میں ہندو اِس کی پوجا کیا کرتے تھے۔تاریخی اہمیت کا حامِل یہ مندر آج بھی اپنی اصلی حالت میں موجود ہے۔

آج جبکہ دُنیا گلوبل ویلج کا روپ دھار چکی ہے اور پہلے کی نسبت اب تعلیم کی اہمیت کئی گنا بڑھ گئی ہے مگر ہمارے علاقہ کی بدقسمتی دیکھیں کہ ہمارے پاس ابھی تک لڑکیوں کے لئے صرف پرائمری سکول ہے۔یہ خوفناک حقیقت خادم اعلی پنجاب کےَ ’’پڑھا لکھا پنجاب ہمارا‘‘ پروگرام پر اور اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے۔

کٹھہ مصرال میں کُل پانچ مساجد ہیں اور یہاں کی’’ جامع مسجِد بوڑھ والی‘‘ دیکھنے سے تعلُق رکھتی ہے۔کٹھہ مصرال کے مکینوں کے لئے واٹرسپلائی بھی قائم کی گئی ہے جِس کے پائپوں کا جال پورے گاؤں میں بچھایا گیا ہے جِس کا پانی پینے اور دوسری ضروریاتِ زندگی کے کاموں میں اِستعمال میں لایا جاتاہے۔مندرجہ بالاتمام ترقیاتی منصوبوں کا سِہرا ضلع خوشاب کی ہر دِل عزیز شخصیت و سابق وفاقی وزیر ملِک نعیم خان اور سابق پارلیمانی سیکرٹری ملِک عمر اسلم اعوان کے سَر ہے جِن کی شبانہ روز محنت کی بدولت یہ منصوبے پایہ تکمیل کو پُہنچے۔

کٹھہ مصرال کے تھوڑا سا شُمال میں غوث الزماں پیر سید محمد مقصود علی شاہؒ صاحب کا ڈیرا بھی ہے جہاں ہر سال اِسلامی مہینے کے مطابِق۱۸،۱۹شعبان المعظم کی رات کوعُرس مُنعقِدکیا جاتا ہے جِس میں ہزاروں مُریدین شِرکت کرتے ہیں ۔ڈیرا پیر صاحب کے مغرب میں پہاڑ کے بالکُل قریب ایک خَستہ حال’’ قدیمی قبرِستان‘‘ بھی ہے جہاں پر صدیوں پُرانی قبریں اور اور اُن کے کَتبے موجود ہیں ۔کٹھہ مصرال کے تھوڑا سا شُمال میں تاریخی اہمیت کا حامل نہایت مشہور’’ست گھرا‘‘ بھی موجود ہے جِسے مقامی زُبان میں ’’ پَکا کوٹ ‘‘کے نام سے پُکارا جاتاہے۔

پکاکوٹ کے مُتعلِق روایت ہے کہ انگریزوں کے دور میںیہ راہ داری کے لئے اِستعمال کیا جاتا تھا۔کٹھہ مصرال کے بالکُل وسط میں قدیم دور کابنا ہوا ایک بنگلہ بھی ہے جِسے یہاں کے باسی’’ بودھووالے بنگلے‘‘ کے نام سے جانتے ہیں ،بودھووالے بنگلے کے متعلق روایت ہے کہ یہاں ایک ہندو تاجر رہائش پزیر تھااور یہ ’’بودھووالا بنگلا ‘‘آج بھی خستہ حال حالت میں موجود ہے۔

کٹھہ مصرال کے بالکُل مغرب میں پہاڑ کے اُوپر ہندؤں کا ایک مُقدس مقام نہایت ہی خستہ حال حالت میں اَبھی بھی موجود ہے جِسے اہلِ علاقہ ’’ہاتھی ‘‘کے نام سے جانتے ہیں۔ہاتھی کی شکل میں بنے اِس قُدرتی مُجَسمے کے متعلِق روایت ہے کہ یہاں ہندو اس مُجَسمے کی پُوجا کیا کرتے تھے اور ہندو عقیدت مند اِس پر پیسے بھی رکھا کرتے تھے۔

کٹھہ مصرال کے پانچ وکلاء بھی ہیں جن کے نام یہ ہیں راجہ حسن نواز جنجوعہ، ملک احسان قادر اعوان،راجہ عابد حسین جنجوعہ، راجہ ربنواز جنجوعہ،راجہ ارشد محمود جنجوعہ (پراسیکیوٹر)۔ اگر کٹھہ مصرال کی اَدبی تاریخ پر نظر دوڑائی جائے تو میں یہ کہنے میں حق بجانِب ہوں کہ اِس دھرتی پر ادیبوں کی کوئی قابل ذکر ہستی سِرے سے موجود ہی نہیں رہی اور ہاں نوجوانوں میں آج کل عمر حیات تھہیم منظرِعام پر آ رہے ہیں۔جوکہ پنجابی زُبان میں پائے کی شاعری کرتے ہیں۔ عمرحیات تھہیم ’’ ریڈیو پاکستان 

تحریر: شعیب اَنجُم

Check Also

سرائیکی افسانہ "ڈِڈھ دا دوزک” اکھ دی بُکھ وچوں | طلعت نقی

اوتری ، نامُراد ، لوبھِنڑ چور رَن ، تیکوں شرم نئی آئی ، ایویں کریندییں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

error: معذرت سئیں نقل دی اجازت کائینی