Home / سرائیکی شاعری / جمشید ناشاد / اے گال مکدی مکا کے آئے ہیں | غزل سرائیکی

اے گال مکدی مکا کے آئے ہیں | غزل سرائیکی

غزل

اے گال مکدی مکا کے آئے ہیں
اساں تاں بیڑیاں جلاکے آئے ہیں

اے کون ساکوں ودا گلیندے 
اساں تاں پیرے مٹاکے آئے ہیں

وفا دی سکی ہڑیٹھ ولھ کوں
ہنجوں دا پانڑی پلاکے آئے ہیں

فقط اشارہ جو تھۓ تہاڈا
فلک توں تارے لہا کے آئے ہیں

انا دی میت کوں تیڈے در تے
اساں تاں مونڈھیں تےچاکے آئے ہیں

قصےکناریں دی بےرخی دے 
بھنورکوں رو رو سنڑاکے آئے ہیں

پتہ نئیں ناشاد کیویں رس گۓ 
ہنڑیں تاں اوکوں منا کے آئے ہیں.

جمشیدناشاد

Check Also

سرائیکی شاعر منشو بھٹہ سئیں ہونڑی دی ہک نظم ”سندھو دی منت“

سرائیکی نظم سندھو دی منت تیکوں تیڈیاں سپیاں دا واسطہ ساڈے پاسے بھاہ ءے ساڈے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔