Home / سرائیکی شاعری / احمد خان طارق / خیر دا حال ہے دکھدے پئے ہیں | احمد خان طارق

خیر دا حال ہے دکھدے پئے ہیں | احمد خان طارق

گیت

خیر دا حال ہے دکھدے پئے ہیں
قہر دا کال ہے دکھدے پئے ہیں

نبھدی پئی ہے شہ لجپال ہے
ڈھول پریں ہے چوڑھا نال ہے
دید کوں دید دا ڈاڈھا کال ہے
بے مہری ہے وقت زوال ہے

شوق کمال ہے دکھدے پئے ہیں

کوئی سدھ کائنی کیا تھیندے ہیں
کیا کھاندے ھیں کیا پیندے ہیں
پھٹ سیندے پر کیا سیندے ہیں
نہ مردے ہیں نہ  جیندے ہیں

کتواں سال ہے دکھدے پئے ہیں

ڈکھ توں ڈردے خون کریندے
دھاڑ پکاراں بہہ پکریندے
موت کوں جیکر موت منیندے
مر گئے ہوندے قل تھی ویندے

تیڈی بھال ہے دکھدے پئے ہیں

شہر سجنڑ دا لوک سجنڑ دے
اساں چھوڈے ہیں کہیں ونڑ دے
سو سو مینہڑیں کئی کئی منڑ دے
جیندے پئے ہیں نہ  جیونڑ دے

جان جنجال ہے دکھدے پئے ہیں

حال دا حال ہے دھاں دی دھاں ہے
‏”طارق” بیلہ سکھڑاں ناں ہے
نہ او گھنڈیاں دی توں تاں ہے
ڈیکھ  اساڈو ساڈا ہاں ہے

جینجھی جال ہے دکھدے پئے ہیں

خیر دا حال ہے دکھدے پئے ہیں ۔

 

سئیں احمد خان طارق 

Check Also

Image For Jamshid Nashad

ہتهیں تے چاکے گهن ونجے یاپیریں پاکے گهن ونجے | جمشید ناشاد

ہتهیں تے چاکے گهن ونجے یاپیریں پاکے گهن ونجے اساں تاں ککه ہسے ہوا جتهاں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔