Home / اردو شاعری / ﺗُﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﮨﯿﮟ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ،

ﺗُﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﮨﯿﮟ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ،

ﺗُﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﮨﯿﮟ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ،

ﺗُﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﮨﯿﮟ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ،
ﺗُﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﮨﯿﮟ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ،

ﮐﺒﮭﯽ ﺳُﻦ ﻟﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺣﮑﺎﯾﺘﯿﮟ۔
ﺗُﺠﮭﮯ ﮔﺮ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻼﻝ ﮬﻮ،
ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺗُﺠﮫ ﺳﮯ ﮔﻠﮧ ﮐﺮﻭﮞ؟
ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐُﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﺟﻮﺍﺏ ﺍﺏ
ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺎ۔
ﺗُﻮ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﮐﯿﺴﮯ ﯾﻘﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ،
ﻣُﺠﮭﮯ ﺗﻮ ﺑﺘﺎ ﺩﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭﮞ؟
ﯾﮧ ﺟﻮ ﺑﮭﻮﻟﻨﮯ ﮐﺎ ﺳﻮﺍﻝ ﮬﮯ،
ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﻥ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﻤﺎﻝ ﮬﮯ۔
ﺗُﻮ ﻧﻤﺎﺯِ ﻋﺸﻖ ﮬﮯ ﺟﺎﻥِ ﺟﺎﮞ،
ﺗُﺠﮭﮯ ﺭﺍﺕ ﻭ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﻭﮞ۔
ﺗﯿﺮﺍ ﭘﯿﺎﺭ ﺗﯿﺮﯼ ﻣﺤﺒﺘﯿﮟ،
ﻣﯿﺮﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺗﯿﮟ۔
ﺟﻮ ﮬﻮ ﺟﺴﻢ ﻭ ﺟﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺍﮞ ﺩﻭﺍﮞ،
ﺍُﺳﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ ﺟُﺪﺍ ﮐﺮﻭﮞ؟
ﺗُﻮ ﮬﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ، ﺗُﻮ ﮬﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﮬﮯ،
ﺗُﻮ ﮬﮯ ﺷﺎﻡ ﺗُﻮ ﮬﯽ ﺳﺤﺮ ﻣﯿﮟ ﮬﮯ۔
ﺟﻮ ﻧﺠﺎﺕ ﭼﺎﮬﻮﮞ ﺣﯿﺎﺕ ﺳﮯ،
ﺗُﺠﮭﮯ ﺑﮭﻮﻟﻨﮯ ﮐﯽ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﻭﮞ۔

Check Also

کبھی کبھی یہ ہوتا ہے

کبھی کبھی یہ ہوتا ہے کسی بھی جان موسم میں۔۔۔ رات کو میں سوتی ہوں۔۔ …